Month: July 2017

For my friends who support PMLN and Sharif Family (in Urdu)

JIT

مسلم لیگ نون کے حامی دوستوں اور عزیزوں کے نام

آج کل دنیا بھر میں جے۔آئی۔ٹی رپورٹ کا ہنگامہ برپا ہے۔ میرے چند بہت پیارے دوست اور نہایت قریبی عزیز و اقارب مسلم لیگ  نون اور میاں نواز شریف کو بہت پسند کرتے ہیں اور اس رپورٹ کے آنے کے بعد بہت پریشان اور ناراض ہیں کیونکہ ان کے خیال میں عمران خان اور دیگر ملک دشمن قوتیں پاکستان کو ترقی کرتا نہیں دیکھ سکتیں اور اسی لئے میاں صاحب اور ان کے خاندان کے خلاف سازشیں کر رہی ہیں۔

آئیے آج میں اس بارے میں بالکل ایمانداری سے اپنی رائے پیش کرتا ہوں۔ میں چاہے عمران خان کا حامی ہوں لیکن اس وقت میں بالکل غیر جانبدار ہو کر اپنا تجزیہ پیش کرتا ہوں۔ میں یہ کہنا چاہوں گا کہ پاکستان ایک جمہوری ملک ہے کوئی شاہی ریاست نہیں۔ یہاں عوام ووٹ دے کر اپنے حکمران نمائندے منتخب کرتے ہیں جو ملک کے لئے قانون سازی کرتے ہیں۔ بدقسمتی سے آپ میاں نواز شریف اور ان کی وزارت عظمٰی کے تینوں ادوار کا جائزہ لیں تو حیران رہ جائیں گے۔۔۔ انہیں شہباز شریف کے علاوہ کوئی اور نہیں ملا جسے پنجاب کی وزارت اعلٰی کے لئے مناسب سمجھتے۔ اسی طرح اب مرکز میں ان کی بیٹی  مریم نواز کو تیار کیا جا رہا تھا کہ اگلی مرتبہ وزارت عظمٰی کی امیدوار وہ ہوں گی۔ میں پوچھتا ہوں کیوں؟؟؟ احسن اقبال، سعد رفیق، خواجہ آصف اور چوہدری نثار جیسے منجھے ہوئے سیاست دانوں کا کیا قصور ہے کہ ان میں سے کوئی یہ عہدہ نہیں سنبھال سکتا؟؟؟ اسی طرح پنجاب کی حکمرانی کے لئے حمزہ شہباز شریف کو تیار کیا جا رہا ہے۔ کیا پاکستان ان کے باپ کی جاگیر ہے؟؟؟؟ نازک ترین حالات میں بھی نواز شریف نے وزارت خارجہ کا اہم ترین منصب اپنے پاس رکھا ہوا ہے۔ کیا ان کی پوری پارٹی میں ایک بھی قابل انسان نہیں جسے یہ عہدہ دیا جا سکے؟؟؟

ماڈل ٹاؤن میں منہاج القرآن کے ۱۲ افراد کو انہوں نے قتل کروا دیا لیکن حرام ہے جو کسی کو انصاف ملا ہو اور قاتلوں کو کوئی سزا ملی ہو۔ اسی طرح ایک اور انتہائی تشویش ناک بات یہ ہے کہ نواز شریف ہمیشہ اپنے غیر ملکی دوروں کے دوران وہاں مقیم پاکستانیوں اور دیگر بزنس اونرز (Business Owners) کو پاکستان اور بالخصوص پنجاب میں سرمایہ کاری کرنے پر قائل کرتے نظر آتے ہیں کہ  ہمارے ملک میں انویسٹ کریں۔ ہم ہر طرح کی ضمانت دیتے ہیں۔ جبکہ ان کی اپنی انویسٹمنٹ سعودی عرب اورہمارے  دشمن ملک بھارت میں ہے۔ پاکستان کا وزیر اعظم ہوتے ہوئے دشمن ملک میں انڈسٹری لگانا نواز شریف کی ملک دشمنی کا واضح ثبوت ہے۔

اب آتے ہیں اصل بات کی طرف۔۔   مے فیئر فلیٹس لندن کے بارے میں مریم نواز، حسن نواز اور حسین نواز کے بیانات میں اتنا واضح تضاد ہے کہ اس کی کوئی وضاحت دی جا ہی نہیں سکتی۔ ان کے بیانات کے ویڈیو یو ٹیوب پر دیکھے جا سکتے ہیں۔ کھلِ عام جھوٹ بولا جا رہا ہے۔قطری شہزادے سے ایک جعلی  خط تیار کروایا گیا جو جعلی ثابت ہوا۔

 پاکستان سے دولت نکال کر، جس کے ذرائع بھی واضح نہیں، بغیر ٹیکس ادا کئے لندن منتقل کی گئی۔ ایک خط جس نے اس معاملے میں کلیدی کردار ادا کیا وہ مریم کی حقیقت کھلنے  کا باعث  بنا۔ اس خط  پر ۲۰۰۴ء کی تاریخ درج ہے اور مریم کے دستخط ہیں لیکن Calbri  کا جو فونٹ استعمال کیا گیا ہے وہ مائیکرو سافٹ نے جنوری ۲۰۰۷ ء میں لانچ کیا تھا، یعنی کہ یہ خط بعد میں جعل سازی سے تیار کیا گیا۔ یہ ٹیکنکل غلطی اس خاندان کے لئے بہت بھاری ثابت ہوئی۔ اور بھی بہت کچھ ہے لکھنے کو لیکن میرے خیال میں اتنا ہی کافی ہے کہ یہ خاندان ملک اور اپنی پارٹی کے وفادار  ساتھیوں کے ساتھ کس حد تک مخلص ہے۔ لہٰذا میری آپ سے ہاتھ جوڑ کر درخواست ہے کہ اپنی آنکھیں اور دل کھول کر پوری سچائی سے سوچیں اور ان لوگوں کی ناجائز حمایت اور پوجا کرنا چھوڑ دیں۔ اب عدالت کو ان سے نمٹنے دیں۔ انشا اللہ زرداری کی باری بھی جلد آنے والی ہے اور پیپلز پارٹی کا بھی جنازہ جلد نکل جائے گا۔

Advertisements